ترکی اور یونان میں جنگ تیسری عالمی جنگ کی صورت اختیار کر سکتی ہے

01 May,2022

ترکی نے نیٹو کے ایک ملک یونان کو حملے کی دھمکی دے دی اس کے ساتھ ہی ترکی نے پورے یورپ کو انجام بھگتنے کی بھی دھمکی دے دی ۔ تو اس کے بعد اب یونان کا ساتھ دینے کیلیۓ کئ یورپی ممالک سامنے آ رہے ہیں ۔ اور ایک مسلم ملک یو ۔ اے ۔ ای  بھی یونان کی مدد کیلیۓ تیار ہے ۔ اور یہ حالات دیکھ کر ترکی پریشان ہے ۔ کیونکہ ترکی  جو صرف یونان کو نہیں سنبھال پا رہا لیکن اس نے پورے یورپ کو للکارہ ہے ۔

 

ترکی اور یونان کی جنگ اور چین ، تائوان کی جنگ دونوں ہی تباہی کے دروازے کھلنے کا اشارہ ہے ۔ یونان پوری شدت سے دشمنی نبھانے کو تیار ہے ۔ یورپی یونین کے ممالک یہ جانتے ہیں کہ ترکی اور یونان کی جنگ کی وجہ اردوگان ہے ۔  یونان کا ساتھ دینے کیلیۓ فرانس بھی تیار ہے ۔

 

اور فرانس نے ترکی کو دھمکی دیتے ہوۓ کہا ہے کہ اگر یونان کیلیۓ ترکی کی طرف سے ایک بھی گولی چلی تو فرانس چپ نہیں بیٹھے گا ۔ ادھر یو ۔ اے ای  نے اپنے چار ایف 16 طیارے یونان کی مدد کیلیۓ روانہ کر دیۓ ۔ یہ حالات ترکی کی پریشانی بڑھا رہے ہیں ۔ اس جنگ میں پاکستان ، ایران اور چین کے علاوہ ترکی کو روس کا ساتھ حاصل ہے ۔ دوسری طرف یورپی یونین ، امریکہ اور نیٹو ممالک یونان کے ساتھ ہیں ۔

 

  دنیا جانتی ہے کہ اگر ترکی اور یونان میں جنگ ہوئ تو  یہ جنگ تیسری عالمی جنگ ہو سکتی ہے ۔ ادھر ترکی اور یونان دونوں نیٹو میں شامل ہیں اس لیۓ امریکہ پھونک پھونک کر قدم رکھ رہا ہے ۔  

 

مزید پڑھیں: امریکہ کے رویے نے چین کا حوصلہ بڑھا دیا
 

Share This Article